News in Urdu اردو خبریں

1174
0

چترال میں پی ٹی سی ایل کی طرف سے انٹرنیٹ کے صارفین کے ساتھ روا رکھے جانے مذاق کا فوری نوٹس لیا جائے۔جے آئی یوتھ پریس کانفرنس
چترال (بشیر حسین آزاد) جماعت اسلامی یوتھ ضلع چترال کے صدر وجیہ الدین نے پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی سے مطالبہ کیا ہے کہ چترال میں پی ٹی سی ایل کی طرف سے انٹرنیٹ کے صارفین کے ساتھ روا رکھے جانے مذاق کا فوری نوٹس لیا جائے جہاں ایک ماہ سے ڈی۔ایس۔ ایل سروس بند ہے اور اپٹیکل فائبر سسٹم کی تنصیب کے باوجود چالو کرنے میں غیر ضروری تاخیر اور صارفین سے 4GBانٹرنیٹ کی چارجز وصول کرکے صرف 500MBکا سروس دیا جارہاہے ۔ ویلج ناظمین فورم کے ضلعی صدر سجا داحمد خان، جنرل سیکرٹری نوید احمد بیگ اور جے ۔آئی یوتھ کے رہنماؤں جہا ن زیب خان، مقصود الرحمن ، عبدالعزیز خان ،صارفین ڈی ایس ایل اور دوسروں کی معیت میں بدھ کے روز چترال پریس کلب میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ جدید دور کا بنیاد انٹرنیٹ کی سہولت پر ہے اور نوجوان طبقہ اور طالب علم اس جدید سہولت پر انحصار رکھتے ہیں اور چترال میں سینکڑوں طلباء وطالبات یونیورسٹیوں کے ساتھ ان لائن ہوکر تعلیم حاصل کررہے ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ پی ٹی سی ایل انتظامیہ نے گزشتہ سال سے چترال کے صارفین کے ساتھ سنگین مذاق کا سلسلہ شروع کیا ہے اور شکایتوں کی شنوائی نہ ہونے پر انٹرنیٹ صارفین سڑکوں پر آ نے پر مجبور ہوگئے ہیں ۔ انہوں نے اس بات پر حیرانگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اپٹیکل فائبر کی لائن اور مشینری چترال میں نصب کرنے کے باوجود اسے چالو نہیں کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے پی ٹی سی ایل حکام کو خبر دار کرتے ہوئے کہاکہ چترالی عوام کی شرافت کا مزید امتحان نہ لیا جائے ورنہ وہ حالات سے تنگ ہوکر احتجاج پر اتر آتے ہوئے پی ٹی سی ایل کے دفاتر کو تالا لگا نے پر مجبور ہوں گے ۔ انہوں نے پی ٹی اے سے مزید مطالبہ کیاکہ وارید موبائل فون کے خلاف بھی کاروائی کی جائے جوکہ چترال میں 4Gکی چارجز صارفین سے وصول کرنے کے باوجود مطلوبہ سروس فراہم کرنے میں ناکام ہے جو کہ صارفین کو لوٹنے کے مترادف ہے۔ اس سے قبل سینکڑوں انٹرنیٹ کے صارفین نے پولوگراونڈ سے ایک جلوس نکالا جوکہ پی ٹی سی ایل آفس کے سامنے کچھ دیر دھرنا دینے کے بعد چترال پریس کلب میں اختتام پذیر ہوگئی ۔ مظاہرین نے پی ٹی سی ایل کے خلاف شدیدنعرہ بازی کی۔

کمانڈنٹ چترال سکاؤٹس کرنل نظام الدین شاہ کا ایف سی پی ایس مستوج کادورہ
چترال(بشیر حسین آزاد)کمانڈنٹ چترال سکاؤٹس کرنل نظام الدین شاہ نے ایف سی پی ایس مستوج کا دورہ کیا۔مستوج پہنچنے پر سکول کے بچوں نے انہیں گلدستہ پیش کرکے اُن کا استقبال کیا۔اس موقع پر سکول میں سادہ اور پروقار تقریب منعقد کی گئی۔ایف سی پی ایس مستوج نے تحصیل لیول پر منعقد آفاق اکیڈیمی کے زیر اہتمام انسائیکلوپیڈیا کوئز کمپٹیشن میں تحصیل مستوج سے پہلے تینوں پوزیشن ایف سی پی ایس مستوج کے جماعت ششم کی طالبہ سعیدہ فصیحہ فراز نے پہلی،شمایلہ بی بی نے دوسری اور سیمہ آمر نے تیسری پوزیشن حاصل کی۔30 اکتوبرکو گورنمنٹ سنٹینیل ماڈل سکول چترال میں کوئز کمپٹیشن ڈسٹرکٹ لیول پر منعقد کی گئی جہاں پورے ڈسٹرکٹ سے18طلباء نے شرکت کی جس میں ایف سی پی ایس مستوج کی طلباء سعیدہ فصیحہ فراز نے پہلی پوزیشن حاصل کی اور اسی سکول کی طالبہ سیمہ آمر نے دوسری پوزیشن حاصل کی تھی۔کمانڈنٹ چترال سکاؤٹس کرنل نظا، الدین شاہ نے ان کی اس شاندار کامیابی پر ان کو مبارکباد دی اور ان کی حوصلہ افزائی کے لئے ان بچیوں میں کیش انعامات تقسیم کی اور تمام سکول کے بچوں اور بچیوں میں مٹھائیاں بھی تقسیم کی۔

آغاخان ہیلتھ سروس پاکستان چترال کے زیرنگرانی کام کرنے والی (سی اے ایچ ایس ایس )پراجیکٹ کی طرف سے چترال کے مختلف علاقوں میں دماغی صحت کا عالمی دن منایا گیا
چترال (بشیر حسین آزاد)آغاخان ہیلتھ سروس پاکستان چترال کے زیرنگرانی کام کرنے سنٹرل ایشیاء ہیلتھ سسٹم اسٹرتھینگ(سی اے ایچ ایس ایس )پراجیکٹ کے زیرتعاون معدے،بلڈپریشر،یرقان،بچے اورماں کی صحت کے حوالے سے لاسپور،پرواگ،بگوشٹ گرم چشمہ،مدکلشٹ،سہت موڑکہواوراویرک گرم چشمہ سمینار منعقدکیاگیااوردماغی صحت کا عالمی دن منایا گیا۔اس موقع پر سنٹرل ایشیاء ہیلتھ سسٹم اسٹرتھینگ(سی اے ایچ ایس ایس )پراجیکٹ کے سوشل آرگنائزسجاد زرین،ڈاکٹرشبیراحمدڈی ایچ کیوہسپتال چترال،ڈاکٹرنسیم اورسیکالوجیٹ ڈاکٹرمس شازیہ نے کہاکہ آغاخان ہیلتھ سروس پاکستان چترال کے زیرنگرانی کام کرنے(سی اے ایچ ایس ایس )پراجیکٹ چترال کے دوردرازپسماندہ علاقوں میں بنیادی صحت عامہ کے حوالے سے کمیونٹی کوگھرگھر پیغام دیتے ہیں ۔جس سے دیہاتی علاقوں میں رہنے والے لوگوں کوبہت فائد ئے ہوتے ہیں ۔اورساتھ ہی چترال کے سرکاری اورغیرسرکاری ہسپتالوں کومعیاری آلات دیگرسامان بھی فراہم کرتے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ مشہور زما نہ ضرب المثل ہے کہ’’ جان ہے تو جہاں ہے ’’ اچھی صحت سے ہی تعلیم اور دیگر معاملات زندگی کو چلایا جا سکتا ہے پاکستان کی تقریبا 70فیصد آبادی دیہاتوں پر مشتمل ہے جہاں صحت کی بنیادی سہولتیں نہ ہونے کے برابر ہیں علاوہ ازیں غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے والے گھرانوں کی بھی اکثریت ہے۔جنہیں علاج تک کی سہولت میسر نہیں آئے روز وہ جان لیوا اور خطرناک بیماریوں میں مبتلا ہو کر زندگی اورموت کی کشمکش میں رہتے ہیں۔ ایسی صورت حال میں معیشت کا معاملہ ہو یا صحت و تعلیم کا عوام کسی مسیحا کے انتظار میں رہتی ہے۔اس حوالے سے عوام کواگاہی دینے کی بہت ضرورت ہے۔انہوں نے دماغی صحت کے عالمی دن کے حوالے سے لیکچردیتے ہوئے کہاکہ اس دن کو منانے کا مقصد دماغی عارضے میں مبتلا افراد کی طرف توجہ دینا ہے ۔اور دماغ انسانی جسم کا ایک اہم ترین جزو ہے جس کا متوازن رہنا صحت مند زندگی کیلئے ضروری ہے۔ ذہنی وجسمانی طور پر صحت مند انسان ہی معاشرہ کی بھلائی کیلئے بہترین صلاحیتوں کو بروئے کار لاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا قانون فطرت سے ہٹ کر زندگی گزارنے سے بھی ذہنی امراض لاحق ہونے کا خدشہ ہوتا ہے لہٰذا ہم سب کوفطرت کے مطابق زندگی بسر کرنے کی سعی کرنی چاہیے۔انہوں نے کہاکہ ماں اوربچے کی صحت سے ہی صحت مندمعاشرہ جنم لیتی ہے اس لئے بیماریوں پرحفاظتی اقدامات سے ہی قابوپایاجاسکتاہے۔ ماں اوربچے کے ہفتے کے دوران لیڈی ہیلتھ ورکرزگھرگھراورگاؤں گاؤں جاکرحاملہ خواتین اوردوسے پانچ سال تک کے بچوں کوتشنج سے بچاؤکے ٹیکے لگائیں گی ۔اگر ماں کی صحت اچھی ہوگی توصحت مندمعاشرہ پروان چڑھے گا۔ طبی لحاظ سے بھی بچے کے پیدا ہونے کے بعد ماں کا جسم اپنی اصل حالت میں اسی صورت میں تیزی سے واپس آتا ہے جب وہ بچے کو اپنا دودھ پلائے اور فطری تقاضوں کو پورا کرے۔انہوں نے کہاکہ جس طرح لوگ اپنے شوگراور بلڈپریشر کوچیک کرواتے رہتے ہیں اسی طرح انہیں چاہیے کہ وہ کبھی کبھی یرقان کاچیک اپ کروالیاکریں ۔یہ انسانی جگرکامرض ہے جس کی علامت آنکھوں کاپیلاپن ہے اس کاوائرس کئی قسم کاہوتاہے انہوں نے کہاکہ یرقان ایک ایسی بیماری ہے جو کہ بہت ہی خطرناک ہو سکتی ہے
اگر اس کا علاج بروقت نہ کیا جائے تو یہ بڑھ سکتی ہے اور آپ کو موت کے منہ میں دھکیل سکتی ہے اور یہ بیماری گرم چیزیں کھانے سے ہوتی ہے اور اس کے علاوہ گندا پانی پینے سے ہوتی ہے یا خون میں انفیکشن کی وجہ سے ہوتی ہے اس بیماری میں انسان کو نیند بھی زیادہ آتی ہے اور انسان کا جسم نڈھال ہو جاتا ہے اور کوئی بھی چیز کھائے جیسے روٹی سالن تو اس سے انسان کے جسم میں گرمائش محسوس ہوتی ہے ہڈیاں بھی درد کرتی ہیں ۔انہوں نے کہاکہ جب انسان اپنی غلطی ،غفلت اورمسائل کی وجہ سے ان اعضاء اورجسم کی ضروریات کے مطابق ان کاخیال نہیں رکھتاتوپریشانیاں اوربیماریاں جنم لیتی ہے ۔معدہ انسانی جسم کاایک اہم حصہ ہے انسانی جسم میں توانائی ،حرکت اورنشونماکی بنیادیں اسی میں ہوتی ہیں انسان چوکچھ کھاتاہے ،اسے کھاکرچبانا،ہضم کرنااورپھرسے جسم انسانی کاحصہ بتانایہ سب کام معدہ اوراس کے معاون اعضاہی کرتے ہیں خوارک ہضم کرنے میں لعاب کااہم کردارہوتاہے۔انہوں نے کہاکہ معدہ کی بیماریوں کی وجہ سے انسان کاپوراجسم متاثرہوتاہے اورمزیدکتنی بیماریوں کے اسباب پیدا ہوتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ بلڈپریشر کو ایک عوامی بیماری کہا جاتا ہے۔اس مرض کو خاموش قاتل بھی کہا جاتا ہے، جو آہستہ آہستہ جسم کو مختلف امراض کا شکار کرکے موت کی جانب لے جاتا ہے کیونکہ اس عارضے کا تعلق ان افراد کی عمروں سے ہے۔ بلند فشار خون قلبی بیماریوں کی بنیادی وجہ ثابت ہوتا ہے۔دل ایک مخصوص وقفے سے دھڑکتا ہے اور ہر دھڑکن کے ساتھ خون کی شریانوں کے ذریعے جسم کو آکسیجن فراہم کرتا ہے۔ خون کی ہر نالی سکڑنے یا پھیلنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔اس موقع پرپرنسپل شیرولی خان،وی سی ناظم وورمحمدالمعروف چوٹو،لوکل ہیلتھ چیئرمین راشدخان،چیئرمین ہیلتھ کمیٹی گل مراد نے سی اے ایچ ایس ایس پراجیکٹ صحت عامہ کے حوالے سے آگاہی پروگرام کوچترال کے پسماندہ علاقوں کے لئے انتہائی اہم قرراردیا۔

LEAVE A REPLY